Cultural IssuesEconomic IssuesRecentSocial Issues

مسافر اپنے پیاروں پر بہت مہربان ہو کر اُن کی عادات کو خود ہی خراب کر دیتے ہیں

تحریر: قاسم سواتی: برطانیہ

روزگار کے لیے بیرون ممالک پہنچنے کے بعد، مسافر ملازمت کی تلاش کے لیے اپنی تمام آسائشیں قربان کر دیتے ہیں۔ نوکری ملنے کے بعد وہ دن رات کام کرنے لگتے ہیں۔ تاکہ وہ زیادہ سے زیادہ پیسہ کما سکیں۔ اور پھر وہی رقم اپنے پیاروں کو  بھیج سکیں یا اس رقم سے کوئی چیز خرید کر انہیں بھیج دیں۔ اور اپنے پیاروں کو کسی طرح خوش اور مطمئن کر سکیں

ان مسافروں میں سے کچھ زیادہ پیسہ کما کر اور اپنے پیاروں کو بھیج کر دکھاوا کرنا چاہتے ہیں۔ ایسا کرنے کے لیے انہیں سخت محنت کرنی پڑتی ہے اور اپنی زندگی کو غیر ضروری طور پر مشکل حالات میں ڈالنا پڑتا ہے۔ ان کی تقلید کرتے ہوئے، دوسرے مسافر زیادہ سے زیادہ پیسہ کمانے اور اسے اپنے پیاروں کو بھیجنے کی پوری کوشش کرنا شروع کر دیتے ہیں۔ اس طرح ان مسافروں میں اپنے پیاروں کی عادتیں بگاڑنے کی مسلسل دوڑ شروع ہو جاتی ہے  جو ان مسافروں کے اپنے ملک میں رہنے والے رشتہ داروں اور دوستوں   کے لیے تو فائدہ مند ہے لیکن طویل مدت میں ان مسافروں کے اپنے مستقبل کے لیے بہت خطرناک ثابت ہو سکتی ہے

ان مسافروں کی اکثریت اپنے پیاروں کے لیے مخلص، سیدھی اور ایماندار ہوتی ہے۔ وہ اپنے بھائیوں، بہنوں، والدین، بچوں اور اس طرح کے دوسرے رشتہ داروں اور دوستوں کے لیے جتنا ممکن ہو سکے قربانیاں دینا چاہتے ہیں۔ اس لیے وہ اپنے وطن میں رہنے والے اپنے پیاروں کو پیسے، تحائف اور دیگر ضروریات زندگی کی ضروری اشیاء بھیجنے کے لیے دن رات محنت کرتے ہیں۔

ان مسافروں کے اپنے پیاروں کو پیسے بھیجنے کی ایک اور وجہ یہ ہے کہ وہ یہ امید کرتے ہیں کہ ایک دن وہ اپنے پیاروں کو بھیجی گئی رقم سے فائدہ اٹھائیں گے جب وہ اپنے وطن واپس  چلے جائیں ۔ نتیجے کے طور پر، وہ اپنی صحت، آرام اور دیگر سماجی زندگی کی پرواہ نہیں کرتے، بلکہ محنت کرتے ہیں، پیسہ کماتے ہیں اور وہی رقم اپنے پیاروں کو مسلسل بھیجتے ہیں۔

اس طرح، ان میں سے زیادہ تر مسافر اپنے پیاروں سے یہ نہیں پوچھتے کہ وہ اپنے ملک میں پیسہ کیسے خرچ کرتے ہیں۔ کیونکہ وہ اپنے ایسے نام نہاد پیاروں پر اندھا بھروسہ کرتے ہیں اور اپنے ملک میں پیسے کے بے دریغ خرچ کرنے پر انہیں جوابدہ نہیں بنانا چاہتے۔

لیکن جب یہ مسافر اپنے وطن واپس آتے ہیں تو کچھ عرصے بعد انہیں معلوم ہوتا ہے کہ ان کی کمائی ہوئی رقم یا تو لاپرواہی سے ضائع ہو چکی ہے یا پھر ان لوگوں نے چھین لی ہے جن پر وہ بھروسہ کرتے تھے۔

اس لیے ان تمام مسافروں کو چاہیے کہ وہ اپنے پیاروں کو بھیجنے والے پیسے کے سلسلے میں  ذمہ داری، جوابدہی اور پیسے کے بامعنی خرچ   کے طریقہ کار پر عمل کریں۔ انہیں شروع میں اپنے پیاروں سے پوچھنا چاہیے کہ وہ پیسہ کیسے خرچ کرتے ہیں؟  پیسہ کہاں گیا؟ اور وہ اپنے ملک میں اپنا طرز زندگی کیسے گزارتے ہیں؟

اس طرح، ان مسافروں کو اپنے ملک میں اپنے پیاروں کی طرف سے پیسہ خرچ کرنے کے طریقہ کار کو نظر انداز نہیں کرنا چاہئے۔ اس کے بجائے، انہیں اپنے پیاروں کو جوابدہ اور ذمہ دار بنانا چاہیے کہ وہ اپنے ملک میں پیسہ کیسے خرچ کرتے ہیں۔

لہٰذا ان مسافروں کو اپنے مستقبل کے بارے میں سنجیدگی سے سوچنا چاہئے اور ان لوگوں کی خاطر اپنی زندگی کو تباہ نہیں کرنا چاہئے جو اس طرح کے احسانات کے مستحق نہیں ہیں۔

قاسم سواتی ایک آزاد صحافی، مصنف اور انسانی حقوق کے کارکن ہیں، جو برطانیہ میں مقیم ہیں، اور ان سے

 پر رابطہ کیا جا سکتا ہے۔ qasimswati2003@yahoo.co.uk  یا  qasimswati.com

Show More

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button