Cultural IssuesRecentSocial Issues

مسلمان رمضان کے مقدس مہینے سے پوری طرح مستفید کیوں نہیں ہو سکتے؟

تحریر:قاسم سواتی

روزے کے بہت سے فوائد کے باوجود مسلمانوں کی اکثریت بعض وجوہات کی بنا پر رمضان کے مقدس مہینے میں روزے سے صحیح طور پر فائدہ نہیں اٹھا پاتی۔ ان میں سے کچھ وجوہات درج ذیل بیان کی جاتی ہیں۔

روزہ فجر سے غروب آفتاب تک پینے، کھانے، جنسی تعلقات اور تمباکو نوشی یا تمباکو کی تمام اشیاء کے استعمال سے پرہیز کرنے کا عمل ہے تاکہ مسلمانوں میں خدا کا شعور یا تقویٰ پیدا ہو۔ جیسا کہ  بار بار کتابوں میں ذکر کیا گیا ہے، کہ روزہ رکھنا اُن لوگوں کے لیے بہت فائدہ مند اور مددگار ہے جو اس کے اُصولوں پر عمل کرتے ہیں، لیکن اکثر مسلمان ان اصولوں پر صحیح طریقے سے عمل نہیں کرتے، اس لیے اس سے پوری طرح فائدہ نہیں اٹھا سکتے۔

مسلمانوں میں کچھ لوگ ایسے ہیں جو صرف نام کے مسلمان ہیں یا جو پیدائشی طور پر مسلمان ہیں۔ یہ مذہب انہیں اپنے والدین اور آباء و اجداد سے بطور روایت ورثے میں ملا ہے، لیکن وہ اسلام کی زیادہ تر تعلیمات پر عمل نہیں کرتے۔ لہٰذا وہ نہ تو پانچ وقت کی نمازیں پڑھتے ہیں اور نہ ہی رمضان کے روزوں کی فکر کرتے ہیں۔ اس کے بجائے، وہ کھانے پینے اور سگریٹ نوشی اور اس طرح کی دوسری چیزوں کی اپنی معمول کی عادات کو جاری رکھتے ہیں، قطع نظر اس کے کہ یہ رمضان کا مہینہ ہے یا نہیں۔

کچھ مسلمان ایسے بھی ہیں جو رمضان کے مہینے میں صوم (روزہ) تو رکھتے ہیں، لیکن وہ روزے کے لیے ضروری اصول و ضوابط پر صحیح طریقے سے عمل نہیں کرتے، اور اتنی غلطیاں اور گناہ کرتے ہیں کہ ان کے روزے کا عمل بے نتیجہ اور بے معنی ہو جاتا ہے۔

کچھ لوگ روزے کی اپنی مذہبی ذمہ داری کو پورا کرنے کے لیے مختلف تکنیکوں کا استعمال کرتے  ہیں  مثلاً  وہ رات کو جاگتے رہنے کی کوشش کرتے ہیں اور سحری کے بعد بستر پر جا کر سونا شروع کر دیتے ہیں اور دن بھر اچھی  طرح سوتے رہتے ہیں۔ وہ عموماً اپنی نماز ظہر کے لیے یا تقریباً عصر کی نماز سے پہلے بیدار ہوتے ہیں جس سے انہیں بغیر کسی پیاس اور دیگر ناخوشگوار صورت حال کا احساس کیے اپنا روزہ مکمل کرنے کا موقع ملتا ہے۔

کچھ مسلمان، خاص طور پر نوجوان، روزے کی حالت میں موسیقی، مختلف ویڈیو گیمز/پلے اسٹیشن کا استعمال وغیرہ کر کے اپنا وقت ضائع کرنے کی کوشش کرتے ہیں۔ سوشل میڈیا کی ایپس، جیسے فیس بک، ٹویٹر، ریڈڈیٹ، لنکڈ ان، ویکیپیڈیا، پنٹیرسٹ، واٹس ایپ یا واٹس ایپ میسنجر  وائبر  فیس بک میسنجر وغیرہ ان میں سے کچھ پلیٹ فارمز اور ایپس کو مذہبی مقاصد کے لیے استعمال  تو کیا جا سکتا ہے، لیکن، زیادہ تر معاملات میں، یہ چیزیں (خاص طور پر نوجوان مسلمانوں) کو رمضان کے مہینے میں روزے سے پوری طرح مستفید ہونے سے دور رکھتی ہیں۔

روزہ صرف دن کے وقت پیاسے رہنے یا بھوکے رہنے کا نام نہیں ہے، کیونکہ ایک مسلمان کی حیثیت سے آپ کو روزہ رکھتے ہوئے بہت کچھ کرنا پڑتا ہے۔ اسلام میں حقوق اللہ (اللہ تعالیٰ کی طرف مسلمانوں کے فرائض) اور حقوق العباد (دوسرے انسانوں کے حقوق یا انسانوں کے  ذمے فرائض) کی ایک بہت بڑی فہرست ہے جس کا مسلمانوں کو احترام کرنا چاہیے۔ یہ دونوں قسم کے حقوق اسلام میں اہم ہیں، لیکن بعض علماء حق العباد کو حقوق اللہ سے زیادہ اہمیت دیتے ہیں، جیسا کہ ایک مرتبہ حضور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم نے اپنے (صحابہ کرام) سے پوچھا: “کیا تم لوگ حق العباد کو اہمیت دیتے ہو؟ جانتے ہو کہ دیوالیہ شخص کون ہے؟” انہوں نے کہا کہ ہم میں سے دیوالیہ وہ ہے جس کے پاس کوئی دولت نہیں ہے۔ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: ”میری امت کا دیوالیہ (مسلمان) وہ ہے جو قیامت کے دن بہت سارے انعامات، نماز، روزہ، زکوٰۃ وغیرہ لے کر آئے گا، لیکن  اس نے اس شخص پر جھوٹا الزام لگایا ہے۔ اس نے دوسرے شخص کے ساتھ زیادتی کی ہے۔ تیسرے پر لعنت بھیجی  ہوگی یا کسی اور کو دھوکہ دیا ھوگا، دوسرے کا خون  بہا یا ہوگا ؛ لہٰذا اسے ان میں سے ہر ایک کو اس کے اجر (نیک اعمال) میں سے دینا ہو گا، اور اگر اس کی نیکیاں ختم ہو جائیں اور وہ ان  کو ادا نہ کر سکے، تو اس کے متاثرین اسے ان کے گناہ دینا شروع کر دیں گے۔ اور، اس طرح، وہ (جہنم) آگ میں جائے گا۔ “[صحیح مسلم]

بدقسمتی سے ہم مسلمان ان حقوق کی پرواہ نہیں کرتے اور جھوٹ بول کر، دھوکہ دے کر، وعدے توڑ کر، بددیانتی، غیبت، بے ایمانی، اپنی ذمہ داریوں اور فرائض سے گریز، گالی گلوچ اور بددعا کر کے کسی نہ کسی طرح دوسرے انسانوں کا استحصال کرتے ہیں۔ ان کی بے عزتی کرنا اور ان کے جذبات کو مجروح کرنا، انہیں زخمی کرنا اور قتل کرنا، اپنے پڑوسیوں، دوستوں، رشتہ داروں (والدین، دادا ، دادی، بچے، نواسے، بھائی، بہن، چچا، خالہ، بھانجی، بھانجے، سسرال، شوہر، بیوی وغیرہ) کے حقوق کو نظر انداز کرنا ، ملازمین اور آجر کے طور پر ہماری ذمہ داریوں کو نظر انداز کرنا؛ اور سب سے بڑھ کر یہ کہ ہمارے ذرائع آمدن وغیرہ میں حلال اور حرام کی تمیز نہ کرنا۔

جب روزے سے جسمانی اور ذہنی تندرستی حاصل کرنے کی بات آتی ہے تو ہم ہماری خوراک کی بے قاعدگیوں اور کمی کی وجہ سے ایک بار پھر ہمارے ’صوم‘ سے زیادہ سے زیادہ فائدہ حاصل نہیں کر پاتے۔ مثال کے طور پر، الریان بینک (برطانیہ کا ایک تجارتی بینک ہے)  جس نے رمضان کے مقدس مہینے میں اپنے صارفین کو کھانے پینے کے لیے کچھ مفید مشورے دیے ہیں، جو ان کے جسم کو توانائی حاصل کرنے اور کھانے پینے کی چیزوں سے ریہائیڈریٹ کرنے میں مدد دے سکتے ہیں۔ کھانے کی ایسی صحت مند عادات کے لیے انہیں چربی والی غذاؤں (جیسے مٹھائیاں، چاکلیٹ، بسکٹ، کیک) سے پرہیز کرنے کی ضرورت ہوتی ہے۔  مثلاً  میٹھا، نمکین اور تلی ہوئی کھانوں سے پرہیز کریں؛ زیادہ پورا کھانا کھائیں؛ سیال سے بھرپور غذائیں کھائیں، جیسے رسبری، نارنگی، چکوترا، اسٹرابیری اور تربوز (پھل) اور پالک، بروکولی، کالی مرچ، اوبرجین، پھول گوبھی، بند گوبھی، ٹماٹر، اجوائن، مولی، کرجیٹ، آئس برگ لیٹش اور کھیرے  (سبزیاں)  وغیرہ وغیرہ  اِسی طرح کافی پانی پئیں (روزانہ آٹھ سے بارہ کپ  تک پانی) جبکہ میٹھے مشروبات سے پرہیز کریں اور اپنے کھانے کو مناسب طریقے سے ہضم کرنے کے لیے آہستہ آہستہ  کھانے کی عادت اپنا لیں

لیکن اکثر لوگ اپنی خوراک میں اس بات کی پرواہ نہیں کرتے کہ ان کے لیے کیا اچھا ہے اور کیا برا، بلکہ وہ صرف اس کے ذائقے سے لطف اندوز ہونے کی کوشش کرتے ہیں۔

ڈاکٹر اور دیگر طبی ماہرین اکثر اپنے مریضوں کو کافی پانی پینے، کم کھانے اور باقاعدہ ورزش کرنے کا مشورہ دیتے ہیں۔ اس کے برعکس، رمضان کے مہینے میں، لوگوں کی اکثریت زیادہ کھانے، کم پینے (یا میٹھے مشروبات پینے) کی کوشش کرتی ہے اور باقاعدگی سے ورزش کرنے کے مشورے کو نظر انداز کرتی ہے۔

قاسم سواتی ایک آزاد صحافی، مصنف اور انسانی حقوق کے کارکن ہیں، جو برطانیہ میں مقیم ہیں، اور ان سے

پر رابطہ کیا جا سکتا ہے۔ qasimswati.com

 

Show More

Leave a Reply

Your email address will not be published.

Back to top button